کثرت سے دُرُود پاک پڑھنے والی بچی NafseIslam | Spreading the true teaching of Quran & Sunnah

This Article Was Read By Users ( 1701 ) Times

Go To Previous Page Go To Main Articles Page



ايک مرتبہ حضرت شیخ محمد بن سليمان جَزُولی رحمۃ اللہ تعالیٰ علیہ وُضُو کرنے کے لئے ایک کنویں پر گئے مگر اُس سے پانی نکالنے کے لئے کوئی چيزپاس نہ تھی۔شَیخ پريشان تھے کہ کیاکريں؟ اتنے ميں ايک اُونچے مکان سے بچی نے ديکھا تو کہنے لگی : ٭یاشیخ! آپ وہی ہيں نا،جن کی نيکیوں کا بڑا چَرچا ہے، اِس کے باوُجُود آپ پريشان ہيں کہ کنويں سے پانی کس طرح نکالوں!\\\'\\\' پھراس بچی نے کنويں ميں اپنا لُعَاب (یعنی تُھوک) ڈال ديا۔ تھوڑی ہی دیر میں کنويں کا پانی بڑھنا شروع ہوگیا حتی کہ کِناروں سے نکل کر زمين پر بہنے لگا ۔شيخ نے وُضُو کیا اور اُس بچی سے کہنے لگے :\\\'\\\' ميں تمہيں قسم دے کر پوچھتا ہوں کہ تم نے يہ مرتبہ کیسے حاصل کیا؟٭ اس بچی نے جواب دیا:
٭ميں رسولِ کریم،رء ُوفٌ رَّحیم صلی اللہ تعالیٰ عليہ والہ وسلم پر کثرت سے دُرُودِ پاک پڑھتی ہوں۔٭
يہ سُن کرحضرتِ شيخ سليمان جزولی رحمۃ اللہ تعالیٰ عليہ نے قَسَم کھائی کہ ميں دربارِ رِسالت ميں پيش کرنے کے لئے دُرُود و سلام کی کتاب ضرور لکھوں گا۔
(مطالع المسرات مترجم،ص۳۳،۳۴)
پھر آپ نے ٭ دَلَائِلُ الْخَیْرَات ٭ نامی کتاب تحریر فرمائی جو بَہُت مشہور ہوئی۔

صلَّی اللہُ تعالٰی عَلٰی محمَّد